display ads

(Urdu Shayari) Urdu Shayari on Mohabbat and Urdu ghazal


یہ جو دیوار کا سوراخ ہے ساجش کا حصہ ہے
لیکن ہم اسے اپنے گھر کا روشن دان کہتے ہیں

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

کـرتـے ھیں مـیری خـامیوں کا تـذکـرہ اسـطرح
لـوگ اپـنے اعـمال میں فـرشـــتے ہـوں جـیسـے

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

کبھی سوچتا ہوں کہ مجھے سوچتا ہوگا وہ
پھر سوچتا ہوں،،، کہ یہ کیا سوچتا ہوں میں

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

کون یاد رکھیگا کسی کو اِس دورِ خود غرضی میں
حالات تو ایسے ہیں لوگوں کو خدا یاد نہیں

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

کتنے لہجوں کے غلافوں میں چھپاؤں تجھکو
میرے احباب میرا موضوعِ سخن جانتے ہیں

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

انوکھی وضع ہے سارے زمانے سے نرالے ہیں
یہ عاشق کون سی بستی کے یارب رہنے والے ہیں

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

‏وہ الم کشوں کا ملنا___ وہ نشاطِ غم کے سائے
 کبھی رو پڑے تبسم______ کبھی زخم مسکرائے

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

دوست کی جدائی کی غم مت کرنا
دور رہ کر دوستی ختم مت کرنا
اگر ملوں زندگی کی راہ پر ہم کبھی
تو ہمیں دیکھ کر اپنی آنکھیں بند مت کرنا

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

ﺭﺍﺱ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﮯ ﻣﺤﺒﺖ بھی ﮐﺌﯽ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ
وﮦ ﺑﮭﯽ ﻋﺮﺷﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﺗﺎﺭﮮ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ
ﺍﮎ ﺷﺨﺺ ﮨﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ......  ﻣﺘﺎﻉِ ﺩﻝ ﻭ ﺟﺎﮞ
ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺍﺏ ﻟﻮﮒ ﺑﮭﯽ ﺳﺎﺭﮮ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

نگاہیں نیچی کرکے اپنی راہ چلنا
لوگ پلکوں سے بھی الفاظ چرالیتے ہیں

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

ہمیں چراغ سمجھ کر بجھا نہ پاؤگے
ہم اپنے گھر میں کئی آفتاب رکھتے ہیں
یہ مے کدہ ہے وہ مسجد ہے وہ ہے بت خانہ
کہیں بھی جاؤ فرشتے حساب رکھتے ہیں

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

غزل
جل کر ذراسا بجھ گیا دیوار و در کی بات 
مانی نہیں چراغ نے شمس و قمر کی بات
ملتے ہیں جب بھی کرتے ہیں آپس میں چھیڑ چھاڑ
کرتے نہیں ہیں بچے بھی علم و ہنر کی بات
کیوں بحث کر رہے ہو یہ اردو میں بھی رہے
عربی تلک درست ہے زیر و زبر کی بات
مجھ کو بھی علم ہے کبھی ہونی تو ہے نہیں
ہر شخص پر عیاں مرے فکر و نظر کی بات
اچھا لگا یہ سن کے قبیلے میں آج کل
کمزور لوگ کرتے ہیں تیر و تبر کی بات
کچھ لوگ فقر و فاقہ پہ کرتے ہیں تبصرہ
اچھی سبھی کو لگتی نہیں سیم و زر کی بات
حیراں ہے باغباں کہ بڑی احتیاط سے
سن کر ہوائیں چلتی ہیں برگ و ثمر کی بات
رکتی ہے اک اسی کی عنایت پہ جا کے دوست
برق و شرر کی ہو کہ چلے بحر و بر کی بات
کچھ لوگ کہہ رہے ہیں کہ اچھی نہیں لگی
ساحل مری زبان سے لعل و گہر کی بات
✍🏼 مشتاق ساحل جلگاؤں

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

میرے ہاتھ ہیں بندھے مگر سفر شرط ہے 
کس سے کہوں کے پائوں کے کانٹے نکال دے
میں تاج ہوں تُو مجھے سر پر چڑھا کر دیکھ
یا۔اس قدر گرا کے زمانہ مثال دے

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

پُرکیف نظاروں کو نظر ڈھونڈ رہا ہے 
بے چینیوں میں چین بشر ڈھونڈ رہا ہے
مغرب کی محبت میں میرا رہبرِ ملت
زیرِ زمین شمس و قمر ڈھونڈ رہا ہے 
دینِ مبیں کا پُرسکوں گلزار چھوڑ کر
صحراؤں میں سایہءِ شجر ڈھونڈ رہا ہے
سردارِ  دوجہان  کی  سنت کے بجائے
بدعات کی وادی میں اَجَر ڈھونڈ رہا ہے
ہر بار انتخاب سے یہ چشمِ خود فریب
مغرب زدوں میں طرز عمر ڈھونڈ رہا ہے 
خوش فہمیوں کے دوش میں اُڑتا ہوا ہُدہُد
موجودہ شاعروں میں جِگر ڈھونڈ رہا ہے
(جگر سے مراد جگر مرادآبادی)

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

یہ سنگ دلوں کی دنیا ہے یہاں سنتا نہیں فریاد کوٸ
یہاں ہنستے بھی ہیں لوگ اس وقت جب ہوتا ہے برباد کوٸ

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

تھوڑی تھوڑی ہی سہی باتیں تو کیا کرو 
چپ رہتے ہو تو بھول جانے کا احساس ہوتا ہے

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

رخصت ہوا تو بات مری مان کر گیا
جو اس کے پاس تھا وہ مجھے دان کر گیا
بچھڑا کچھ اس ادا سے کہ رت ہی بدل گئی
اک شخص سارے شہر کو ویران کر گیا
دلچسپ واقعہ ہے کہ کل اک عزیز دوست
اپنے مفاد پر مجھے قربان کر گیا
کتنی سدھر گئی ہے جدائی میں زندگی
ہاں وہ جفا سے مجھ پہ تو احسان کر گیا
کاشؔ میں بات بات پہ کہتا تھا جس کو جان
وہ شخص آخرش مجھے بے جان کر گیا

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

محبت مختصر بھی ہو تواُس کو بھولنـے میں عُمر
لگتی ہے۔، وہ چہرہ بھول جاتا ہے، مگـر اُس سـے جُــــڑی دِلکی سبھـی یادیـــــں رُوح کـے شجـــــــــر ســـے شـاخ در شـاخلپٹی ہی رہتی ہیں.

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

بھولے ہیں رفتہ رفتہ انہیں مدتوں میں ہم 
 قسطوں میں خودکشی کا مزا ہم سے پوچھیئے 

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

ہنستے ھوۓ چہروں کو غموں سے آزاد نہ سمجھو
تبسم کی پناہوں میں __ ہزاروں درد ہوتے ہیں

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

تم "دوست" ھو میرے "سدا" کے لیے
میں "زندہ" ھوں تیری "وفا" کے لیے
کر لینا لاکھوں "شکوے" مجھ سے
مگر کبھی خفا نہ ھونا "خدا" کے لیے

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

وہ کہتا ہے کہ سوچ لینا تھا__محبت کرنے سے پہلے
اسے کیا پتا کہ سوچ کر سازش__کی جاتی ہے محبت نہین 

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

وقتــــــ بہــا لــــے جــــاتا ہـــے نـــام و نشــــاں مگـــر
 کــوئــی ہــم میــں رہ جـــاتـــا ہــــے اور کســـی میـــں ہـــم

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

اسی ایک فرد کے واسطے،
 مرے دل میں درد ہے کس لئے؟
 مری   زندگی   کا  مطالبہ،
 وہی  ایک  فرد  ہے  کس لئے؟
 کوئی واسطہ جو نہیں رہا،
 تری آنکھ میں یہ نمی ہے کیوں؟
 مرے  غم  کی  آگ  کو دیکھ کر،
 تری  آہ  سرد  ہے  کس لئے؟

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

مُحبت خُود بَتاتـــــــــی ہے
کَـــہاں کِس کَا ٹِھکَانـــہ ہے
کِسے آنکھوں میں رَکھنا ہے
کِسے دِل مِیں بَــــــــسانا ہے

رِہا کَرنا ہے کِـــــس کو 
کِسے زَنجیر کَــــرنا ہے
مِٹَانا ہـے کِسے دِل سے
کِسے تِحرِیر کَـــرنا ہے

گَھرَوندَا کَب گِرَانا ہے
کَـــہاں تَعمِیر کَرنا ہے
اِسے مَعــــلوم ہَوتا ہے
سَفر دُشـــوَار کِتنا ہے

کِسی کی چَشمِ گِریہ میں
چُھپا اِقــــــــــــرَار کِتنا ہے
شَجر جَو گــــــِرنے وَالا ہے
وُہ سَایــــــــــہ دَار کِتنا ہے

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

سَفر کـی ہَر صَعوبَت اور
تَمازَت یَاد رَکھتِــــــی ہے
جِسے ســَارے بُھلا ڈَالیں

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

ہم تو پھولوں کی طرح اپنی عادت سے بے بس ہیں
کوئی توڑ بھی دے تو ہم اسے بھی خوشبو دیا کرتے ہیں
​توجہ دے اپنی تعلیم پر,نہ پڑ عشق کے عذابوں میں
اکثر وہ لوگ برباد ہوتے ہیں جو رکھتے ہیں پھول کتابوں میں

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

آکر تیرے قریب یہ کیا بات ہو گئی
میں دیکھتا رہا تجھے اور رات ہو گئی
وہ چاہتے تھے سامنا مجھ سے نہ ہو مگر
اک روز راستے میں ملاقات ہو گئی
پہلی نظر ملی تو ہنسے جارہے تھے وہ
اس طرح ان سے پیار کی شروعات ہو گئی
بادل سے کیسے بھیک میں بارش کی مانگتا
زلفیں جو اسنے کھول دیں برسات ہو گئی

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

رودادِ غم الفت ان سے ہم کیا کہتے کیوں کر کہتے
اک حرف بھی نہ نکلا ہونٹوں سے اور آنکھ میں آنسو آ بھی گئے

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

خواب خوشی کے بو جاتے ھیں لوگ محبت کرنے والے
زخم دلوں کے دھو جاتے ھیں لوگ محبت کرنے والے
آنکھوں آنکھوں میں چل پڑتے ھیں تاروں کے قندیل لئے
چاند کے ساتھ ہی ڈھل جاتے ھیں لوگ محبت کرنے والے

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

تنہا ئیوں سے وحشت اسے بھی تھی
ہاں مجھ سے محبت اسے بھی تھی
نہ جانے کیا ہوا اس نے مڑ کر نہیں دیکھا
ورنہ میرے اُجڑنے کی خبر اسے بھی تھی

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

کاغذ پر نہیـں لکھتے ھـم  راز اپنی  محبت کـے
‏پل  بھر  میـں بکھر  جاتے   ہیـں  الفاظ  محبت کـے
‏تجھے  ٹوٹ کر چاہا ہے  اور عمر بھر  چاہیـں  گـے
‏ایسے  ہی  ہیـں  جاناں  ھمارے  انداز  محبـت کے

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

حسن جب مہرباں ہو تو کیا کیجیے
عشق کی مغفرت کی دعا کیجیے
اس سلیقے سے ان سے گلہ کیجیے
جب گلہ کیجیے ہنس دیا کیجیے
دوسروں پر اگر تبصرہ کیجیے
سامنے آئینہ رکھ لیا کیجیے
آپ سُکھ سے ہیں ترکِ تعلق کے بعد
اتنی جلدی نہ یہ فیصلہ کیجیے
زندگی کٹ‌رہی ہے بڑے چین سے
اور غم ہوں تو وہ بھی عطا کیجیے
کوئی دھوکا نہ کھا جائے میری طرح
ایسے کھُل کے نہ سب سے ملا کیجیے
عقل و دل اپنی اپنی کہیں جب خمار
عقل کی سُنیے، دل کا کہا کیجیے
خمار بارہ بنکوی

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

‏مجھـــــــــے زندگی کا اتنا تجـــــــــربہ تو نہــــــیں۔۔۔
پر ســــــنا ہے ســـــــــادگی میں لوگ جینے نہــــیں دیتے

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

میں چاہنے والوں کو مُخاطب نہیں کرتی
اور تَرکِ تعلق میں وَضاحت نہیں کرتی.
میں اپنی جَفاٶں پے نادِم نہیں ہوتی..
اور اپنی وَفاٶں کی تجارت نہیں کرتی.
خُوشبُو کسی تَشہیر کی مُحتاج نہیں ہوتی..
سَچائی  مگر اپنی وَکالت نہیں کرتی.
احساس کی سُولی پے لَٹک جاتی ہُوں اَکثر..
میں جَبرِ مُسلسل کی شکایت نہیں کرتی.
میں عَظمتِ انسان کی قائل تو ہُوں .
لیکن کبھی بندوں کی عبادت نہیں کرتی.

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

میں اپنے خوں سے جلاؤں گا رہ گزر کے چراغ،
یہ کہکشاں، یہ ستارے مجھے قبول نہیں
شکیبؔ جس کو شکایت ہے کُھل کے بات کرے،
ڈھکے چُھپے سے اِشارے مجھے قبول نہیں

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

مت کیا کر اپنے درد کو شاعری میں بیاں اے دل
 لوگ اور ٹوٹ جاتے ہیں ہر لفظ کو اپنی داستان سمجھ کر

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

محبتوں کے سفر میں یہ کون کہتا ہے
کہ دشتِ چشم سے آبِ ر واں نہیں گزرے؟
تتلیوں کا مجھے ٹوٹا ہوا پر لگتا ہے
دل پہ وہ نام بھی لکھتے ہوئے ڈر لگتا ہے
میں ترے ساتھ ستاروں سے گذر سکتا ہوں
کتنا آساں محبت کا سفر لگتا ہے

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

ہزاروں دُکھ پڑیں سہنا محبت مر نہیں سکتی
ہے تم سے بس یہی کہنا محبت مر نہیں سکتی
ترا ہر بار میرے خط کو پڑھنا اور رو دینا
مرا ہر بار لکھ دینا محبت مر نہیں سکتی
کیا تھا ہم نے کیمپس کی ندی پر یک حسیں وعدہ
بھلے ہم کو پڑے مرنا محبت مر نہیں سکتی
جہاں میں جب تلک پنچھی چہکتے اڑتے پھرتے ہیں
ہے جب تک پھول کا کھلنا محبت مر نہیں سکتی
پرانے عہد کو جب زندہ کرنے کا خیال آ یا
مجھے بس اتنا لکھ دینا محبت مر نہیں سکتی
وہ تیرا ہجر کی شب فون رکھنے سے ذرا پہلے
بہت روتے ہوئے کہنا محبت مر نہیں سکتی
اگر ہم حسرتوں کی قبر میں ہی دفن ہو جائیں
تو یہ کتبوں پہ لکھ دینا محبت مر نہیں سکتی
پُرانے رابطوں کو پھر نئے وعدے کی خواہش ہے
ذرا اک بار تو کہنا محبت مر نہیں سکتی
گئے لمحات فرصت کے کہاں سے ڈھونڈ کر لاؤں
وہ پہروں ہاتھ پر لکھنا محبت مر نہیں سکتی​
مُحبت یَاد رَکھتـــــی ہے



Post a Comment

0 Comments