display ads

(خوبصورت اردو شاعری) Beautiful Urdu Shayari


ہم بھی توانسان ہیں آخرہم سےیہ نفرت کیسی
سب سےلپٹ کرملنےوالوں ہم سےکیوں کتراتےہو

=====================

کون یاد رکھیگا کسی کو اِس دورِ خود غرضی میں
حالات تو ایسے ہیں لوگوں کو خدا یاد نہیں

======================

کتنے لہجوں کے غلافوں میں چھپاؤں تجھکو
میرے احباب میرا موضوعِ سخن جانتے ہیں

==========================

بس یہی دوڑ ہےاس دور کےانسانوں کی
تری دیوار سےاونچی مری دیوار بنے

===========================

وطن کی فکر کر ناداں مصیبت آنے والی ہے
تیری بربادیوں کے مشورے ہیں آسمانوں میں
یہ خاموشی کہاں تک،لذّتِ فریاد پیدا کر
تُو ہو زمیں پر تیری صدا ہو آسمانوں میں

==========================

 نمایاں ہو کے دِکھلا دے کبھی ان کو جمال اپنا
 بہت مدّت سے چرچے ہیں ترے باریک بینوں میں

===========================

یومِ خواتیــــن کے ضمن 

اگر بزمِ ہستی میں عورت نہ ہوتی 
خیالوں کی رنگین جنت نہ ہوتی 

ستاروں کے دلکش فسانے نہ ہوتے 
بہاروں کی نازک حقیقت نہ ہوتی 

جبینوں پہ نورِ مسرت نہ کھلتا 
نگاہوں میں شانِ مروت نہ ہوتی 

گھٹاؤں کی آمد کو ساون ترستے 
فضاؤں میں بہکی بغاوت نہ ہوتی 

فقیروں کو عرفانِ ہستی نہ ہوتا 
عطا زاہدوں کو عبادت نہ ہوتی 

مسافر سدا منزلوں پر بھٹکتے 
سفینوں کو ساحل کی قربت نہ ہوتی

ہر ایک پھول کا رنگ پھیکا سا رہتا 
نسیمِ بہاراں میں نکہت نہ ہوتی 

خدائی کا انصاف خاموش رہتا 
سنا ہے کسی کی شفاعت نہ ہوتی 

=======================

‏ﺑﮍﺍ ﻣﯿﭩﻬﺎ ﺳﺎ ﺯﮨﺮ ﮨﮯ ____ ﺗﯿﺮﯼ ﯾﺎﺩﻭﮞ ﻣﯿﮟ
ﺳﺎﺭﯼ ﻋﻤﺮ ﮔﺰﺭ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ﻣﺠﻬﮯ ﻣﺮﺗﮯ ﻣﺮﺗﮯ

‏=========================

ڈﻭبا ﮨﻮا ﮨﻮﮞ ﺯﮨﺮ ﻣﯿﮟ ﭘﺮ ﭘﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺭہا
ﻣﯿﮟ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﻮ ﺳﮩﮧ ﺭہا ﮨﻮﮞ ﭘﺮ ﺟﯽ ﻧﮩﯿں رہا

==========================

ملا کر خاك میں مجھکو وہ اس انداز سے بو لے     
کھلونا تھا یہ مٹی کا کہاں رکھنے کے قابل تھا

==========================

‏مت کھولنا میری ماضی کی کتابوں کو
جو تھا وہ رہا نہیں جو ہوں کسی کو پتہ نہیں

==========================

سمٹ کر رہ گئے ماضی کی داستانوں تک
حُدودِ ذات سے آگے نکلنے والے لوگ

==========================

ستم تو یہ،ہماری صفوں میں شامل ہیں
چراغ بجھتے ہی خیمہ بدلنے والے لوگ

==========================

ہمارے دور کا فرعون ڈوبتا ہی نہیں
کہاں چلے گئے پانی پر چلنے والے لوگ

===========================

بس ایک شراب کی بوتل دبوچ رکھی ہے 
تجھے بھلانے کی ترکیب سوچ رکھی ہے

===========================

خوبصورت عمل انسان کی شخصیت بدل دیتا ہے۔
اور خوبصورت اخلاق انسان کی زندگی بدل دیتا ہے۔

============================

کھلیں گے لب یہ ہمارے تو ان کو سی لیں گے
اداسیوں کو مقدر بنا کے جی لیں گے
زہر جو ہم کو ملے گا وفا کی راہوں میں
لگے گی دیر نہ ہم مسکرا کے پی لیں گے

============================
  
غربت نہ دے سکی میرے ضمیر کو شکست
جھک کر کسی امیر سے ملتا نہیں ہوں میں
ممکن  نہیں ہے  مجھ سے  یہ طرزِ  منافقت
دنیا  تیرے  مزاج  کا  بندہ  نہیں  ہوں میں

============================

اسے بچائے کوئی کیسے ٹوٹ جانے سے
وہ دل جو باز نہ آئے فریب کھانے سے
وہ شخص ایک ہی لمحے میں ٹوٹ پھوٹ گیا
جسے تراش رہا تھا میں اک زمانے سے
’رکی ’رکی سی نظر آ رہی ہے نبضِ حیات
یہ کون ’اٹھ کے گیا ہے میرے سرہانے سے
نہ جانے کتنے چراغوں کو مِل گئی شہرت
اک آفتاب کے بے وقت ڈوب جانے سے
’اداس ’چھوڑ گیا وہ ہر اک موسم کو
گلاب کِھلتے تھے کل جس کے مسکرانے سے

============================

رسول پاکؐ کے جیسے کسی کی شان تھوڑی ہے
میاں! نعتِ نبیؐ کہنا کوئی آسان تھوڑی ہے
ارے! نبیؐ کے نام لیوا ہیں نبیؐ پر جان دیدینگے
نبیؐ کی جان سے بڑھ کر ہماری جان تھوڑی ہے

============================

عـــــــشق تیری رگیں نیچوڑے گا
دیکھ دیـــوانے اپنــی ہمت نـــہ ہــارنا

============================

‏نه پوچھ رات بھرجاگنے کی وضاحتیں اےدل نادان
محبت میں کچھ.......... سوالوں کےجواب نہیں ہوتے

=============================

تمہاری بات کا میں اعتبار تو کرلوں صاحب 
مگر یہ عمر نہیں ہے فریب کھانےکی

  =============================       

اکثر  اکیلے  میں  اُتنا  ہی  رو  دیتا  ہو گا
ہجوم  میں  جو  جتنا   دنیا  کو   ہنساتا   ہے
سکھلایا  اسی عشق  نے  پروانوں کو  جلنا
پھر یہی عشق شمع  کو رات بھر رلاتا  ہے
 پریشان ہوتے ہو  کیوں اے طبیب جاں
یہ مرضِ عشق ہے جاتے جاتے ہی جاتا ہے
یہاں کمی نہیں عشق میں ٹُھکرائے لوگوں کی
یہاں ہر کوئی لفظوں میں اپنا درد چھپاتا ہے

===========================

بے کیف ہے دل اور جئے جارہاہوں میں
خالی ہے شیشہ اور پئے جارہاہوں میں
پیہم جو آہ آہ کئے جا رہا ہوں میں
دولت ہے غم ،زکوۃ دئے جارہاہوں میں
مجبورئ کمال محبت تو دیکھنا
جینا نہیں قبول،جئے جارہاہوں میں
وہ دل کہاں ہے اب کہ جسے پیار کیجئے
مجبوریاں ہیں،ساتھ دیئے جارہاہوں میں
رخصت ہوئیں شباب کے ہمراہ زندگی
کہنے کی بات ہے کہ جئے جارہاہوں میں
پہلے شراب زیست تھی،اب زیست ہے،شراب
کوئی پلارہاہے ،پئے جارہاہوں میں
شاعر جگر مراد آبادی




Post a Comment

4 Comments

  1. بہت ہی عمدہ اشعار ہیں 💕💕

    ReplyDelete
  2. ابتدا اچھی ہے اللہ کامیابی دے.
    بس گزارش ہے کہ اردو ہندی کے معتبر شعراء کے کلام سے ہی انتخاب کیا جاے,

    ReplyDelete
  3. ابتدا اچھی ہے اللہ کامیابی دے.
    بس گزارش ہے کہ اردو ہندی کے معتبر شعراء کے کلام سے ہی انتخاب کیا جاے,

    ReplyDelete
  4. ابتدا اچھی ہے اللہ کامیابی دے.
    بس گزارش ہے کہ اردو ہندی کے معتبر شعراء کے کلام سے ہی انتخاب کیا جاے,

    ReplyDelete