display ads

आज उसने देखा भी नहीं निगाहें मोड़ कर


जिसको हमने चाहा ज़माने की हदें तोड़ कर
आज उसने देखा भी नहीं निगाहें मोड़ कर
ये जान कर बहुत दुख हुआ मुझे ए दिल
वो खुद भी तन्हा होगया मुझे तन्हा छोड़ कर



Jisko Hamne Chaha Zamane ki Hade Tod Kar
Aaj Usne Dekha Bhi Nahi Nigahen Mod kar
Ye jaan kar Bahut Hua Mujhe aye Dil
Wo Khud Bhi Tanha Hogya Mujhe Tanha Chhor  kar.



 کو ھم نے چاھا زمانے کی حدیں توڑ کر
آج اس نے دیکھا بھی نہیں نگاھیں موڑ کر
یہ جان کر بہت دکھ ھوا مجھے اے دل
وہ خود بھی تنہا ھو گيا مجھے تنہا چھوڑ کر


میرے  زخموں  کی دوا کون بنے گا تیرے بعد
ہم نے تو  اپنے  بھی کھو دیے تمہیں پانے  کے  لیے



Mere Zakhmo ki Dwa kon Banega Tere Bad
Humne To Apne Bhi Khodiye Tumhe Pane ke Liye



मेरे ज़ख्मों की दवा कोन बनेगा तेरे बाद
हमने तो अपने भी खो दिए तुम्हें पाने के बाद


دل لگی نہ ہو جائے کسی سے یہ خیال کرنا میرے دوست
دن تو گزر جاتے ہیں خدا کی قسم راتیں مار دیتیں ہیں



Dil Lagi Na Hojaye Kisi Se ye Khayal Karna Mere Dost,
Din To Guzar jate hain, Khuda ki kasam Raten Maar Deti Hain.



رو پڑا وہ فقیر بھی میرے ہاتھ کی لکیروں کودیکھ کر
کہتا ھے تجھے موت نھیں کسی کی یاد مارے گی



Ro Pada wo Fakir Bhi Mere Haath ki Lakiron ko Dekh kar
Kahta Hai Tujhe Mot Nahi Kisi ki Yaad Maregi.



اُٹھ اُٹھ کے کســی کا  انتظار کر کے دیکھنا
کبھی تم بھی کسی سے پیار کر کے دیکھنا
کیسے ٹوٹتے ہیــــں محبتــــوں کـے رشتــے
غلطیـــاں  دو  چار  کــــــــر  کـــــے  دیکھنا
زندگـــــــی  کا  فلسفہ  سمجھنا  ہـــو  تـــو
بارش میں کچی دیوار کھڑی کر کے دیکھنا
نفرت ہو جائے گــــی تـــــــم کــــو دنیا سے
محبت کســــی سے  بیشمار  کر  کے دیکھنا


بہت اداس ہے کوئی تیرے چپ ہو جانے سے
      ہو سکے تو بات کر کسی بہانے سے
      توں لاکھ *خفا* سہی مگر اتنا تو دیکھ
   کوئی ٹوٹ گیا ہے تیرے روٹھ جانے سے


چوم تو لوں تیرے ہونٹوں کو پر بات بہت دور تک جاۓ  گی
آگ لگے گی ہمارے سینے میں اور جل پوری دنیا جاۓ گی


کھبی لفظ بھول جاوں,کھبی بات بھول جاؤں 
         تجھے اس قدرچاہوں کہ اپنی ذات بھول جاؤں
اٹھ کر کھبی جو تیرے پاس سے چل دوں
               جاتے ہوے خود کو تیرے پاس بھول جاؤں
کیسے کہوں تم سےکہ کتنا چاہا ھے تمہں
             اگر کہنے پہ تم کو آؤں تو الفاظ بھول جاؤں
میرا اداسی سے اگر ملتا ھے تجھ کو خوشی
    تو قسم ھے مجھ کو تیرا کہ مسکان بھول جاؤ ں
تجھے دیکھ دیکھ کہ میرا چلتا ہے یہ سانسیں
                جو تو نظر نہ آیا تو ہر سانس بھول جاؤں


زُلف ریشم ہے تو چہرہ اُجالوں جیسا
وہ تو لگتا ہے، تروتازہ گُلابوں جیسا
اُس کی باتیں تو ہیں گنگھور گھٹاؤں جیسی
اُس کا مخمُور سا لہجہ ہے شرابوں جیسا
خُود ہی کُھلتا ہے مگر مُجھ پہ بھی تھوڑا تھوڑا
اِتنا مُشکل ہے کہ لگتا ہے نِصابوں جیسا
اُس کے دل میں بھی کوئی بات رہی ہو گی
مُجھ سے رُوٹھے تو وہ لگتا ہے خرابوں جیسا



Pagal Kar Deti Hai Mohabbat
Har Mohabbat Karne wale Ko
                  ...Kyu Ke
Ishq Har Nahi Maanta Aur
Dil Baat Nahi Maanta.



شکایت کیا کروں دونوں طرف غم کا فسانہ ہے.
میرے آگے محبت ہے تیرے آگے زمانہ ہے.
پکارا ہے تجھے منزل نے لیکن میں کہاں جاؤں.
بچھڑ کر تیری دنیا سے کہاں میرا ٹھکانہ ہے.
ھم تو ھر بات کو خدا پر چھوڑ دیتے ھیں
ٹوٹے نہ دل کسی کا دل اپنا توڑ دیتے ہیں
ھم بھی انسان ھیں کوئی پھتر تو نہیں
کیوں لوگ ھم کو یوں تنہا چھوڑ  دیتے ھیں






Post a Comment

0 Comments